اسلام آباد ائرپورٹ اترنے والے اوورسیز پاکستانی ہوجائیں ہوشیار، پولیس وردی میں لوٹا جانے لگا

0

راولپنڈی: جڑواں شہروں میں سخت سیکورٹی، دفعہ 144 کا نفاذ دھرا رہ گیا، اسلام آباد اترنے والے اوورسیز پاکستانیوں سے لوٹ مار کی وارداتیں بڑھ گئیں، پولیس کی وردی میں جڑواں شہروں اور جی ٹی روڈ پر اوورسیز پاکستانیوں کو لوٹا جارہا ہے، لیکن پنجاب اور اسلام آباد پولیس ملزمان کو گرفتار کرنے میں ناکام ہے۔

تفصیلات کے مطابق اسلام آباد ائرپورٹ اترنے والے اوورسیز پاکستانی ہوشیار ہوجائیں ، کیوں کہ ائرپورٹ سے گھر جانے کے دوران لوٹ مار کی وارداتیں بڑھ گئی ہیں، اور پولیس کی وردی میں اوورسیز پاکستانیوں کو لوٹا جارہا ہے، گزشتہ دو تین روز کے دوران ایسے دو واقعات سامنے آئے ہیں، لیکن ان میں سے ایک کا بھی ملزم گرفتار نہیں کیا جاسکا، جمعہ کے روز روات کے قریب سعودیہ سے آنے والے شہری کو لوٹ لیا گیا، فرقان نے بتایا کہ وہ صبح اسلام آباد ائیر پورٹ پر اترا، اور گھر کی طرف آ رہا تھا کہ ساگری موڑ سے تھوڑا آگے مین جی ٹی روڈ پر وردی میں ملبوس دوافراد نے گاڑی چیکنگ کے بہانے ہماری گاڑی کے آگے اپنی گاڑی کھڑی کرکے ہمیں روکا۔

ملزمان نے کالی شرٹ اور گرے کلر کی پینٹ پہنی ہوئی تھی اور ہاتھ میں وائر لیس سیٹ پکڑے ہوئے تھے جنہوں نے مجھ سے میرا پاسپورٹ اور ٹکٹ مانگا، جو میں نے انہیں چیک کر ایا ،جس کے بعد انہوں نے میری تلاشی لی اور میری جیب سے بٹوہ نکالا، جس میں ساڑھے آٹھ ہزار ریال تھے، دونوں ملزمان یہ رقم چھین کر گاڑی میں فرار ہوگئے،ان کی گاڑی پر اسلام آباد کا نمبر 475 کی پلیٹ لگی ہوئی تھی، پولیس نے مقدمہ درج کر کے تفتیش کا آغاز کر دیا ہے، اس سے پہلے جمعرات کو اسلام آباد میں تھانہ نون کی حدود سے دو سعودیہ پلٹ شہریوں کو بھی پولیس وردی میں ملبوس افراد نے لوٹ لیا، ان سے ساڑھے 8 ہزار ریال ، دو تولے سونا، موبائل لے اڑے، سعودیہ سے آنے والے دو کزن قدرت شاہ اور بسم اللہ اسلام آباد ائر پورٹ پر اترے، اور میٹرو پر بیٹھ کر چونگی نمبر 26 پر آگئے ، یہاں سے انہوں نے ٹیکسی کا فیصلہ کیا۔

صبح کے ساڑھے 4 بجے تھے، بسم اللہ ٹیکسی والے سے بات کرنے گیا، کہ اس اثنا میں ایک کرولا کار آکر رکی ، جس میں دو افراد پنجاب پولیس کی وردی میں تھے، ان کے پاس اسلحہ بھی تھا، انہوں نے قدرت شاہ کو اشارہ کرکے بلایا، اور پوچھا کہ کہاں سے آئے ہو، انہوں نے بتایا کہ سعودیہ سے آئے ہیں ، گھر جارہے ہیں، جس پر وردی پوشوں نے تلاشی دینے کا کہنا، اور تلاشی لیتے ہوئے، جیب سے ساڑھے 4 ہزار ریال، 8 ہزار روپے،اور ایک تولہ سونا نکال لیا، پھر میرے کزن کو بھی اشارہ کرکے بلایا اور بسم اللہ کو بھی تلاشی دینے کا کہا، اس کی جیب سے بھی 4 ہزار ریال، ایک تولہ سونا، گھڑی، موبائل لے لیا، جب ہم نے سامان مانگا تو انہوں نے گاڑی بھگانے کی کوشش کی، بسم اللہ نے اسٹئیرنگ پکڑ لیا، لیکن دونوں وردی پوشوں نے گاڑی بھگادی ، اور بسم اللہ کو بھی گھسیٹتے ہوئے لے گئے، جس سے وہ شدید زخمی بھی ہوا ہے، اور سر پر ٹانکے آئے ہیں، تھانہ نون نے مقدمہ درج کرلیا، لیکن کیمرے لگے ہیں، سخت سیکورٹی ہے، دفعہ 144 ہے ، لیکن ایسا لگتا ہے کہ ان تمام اقدامات کا تعلق شہریوں کی سیکورٹی سے نہیں، کوئی ملزم نہیں پکڑا گیا، اوورسیز بھی لٹ رہے ہیں۔

Leave A Reply

Your email address will not be published.