برطانیہ میں پراسرار طور پر مرنے والی بچی کی ماں کا پہلا ویڈیو بیان سامنے آگیا

0

جہلم: برطانیہ میں پراسرار طور پر مرنے والی 10 سالہ بچی کی مفرور سوتیلی ماں کا پہلا ویڈیو بیان سامنے آگیا ہے، جس کے بعد پولیس کو یہ امید پیدا ہوگئی ہے کہ بنیش بتول، اپنے شوہر ملک عرفان شریف اور دیور فیصل ملک کے ساتھ یا تو جلد ہی خود جہلم پولیس کو گرفتاری دے دے گی، یا پھر پولیس ان تک پہنچ جائے گی، کیوں کہ ویڈیو بنانے اور اسے اسلام آباد میں برطانوی میڈیا ادارے کی نمائندہ تک پہنچانے کے لئے فون سمیت جو ڈیوائس استعمال ہوئی ہیں، ان کے ذریعہ اب پاکستانی اداروں کو تقریباً تین ہفتوں بعد ان تینوں کا کھرا مل گیا ہے۔

بنیش کے ویڈیو بیان کے بعد جہلم پولیس نے ایک درجن مقامات پر چھاپے بھی مارے ہیں، میرپور میں بھی کچھ گھروں کی تلاشی لی گئی ہے، دوسری طرف عرفان کے والد محمد شریف اور برطانیہ میں موجود بنیش بتول کے ایک قریبی عزیز کے بیان بھی سامنے آئے ہیں، بنیش بتول کے قریبی عزیز نے برطانوی اخبار کو بتایا ہے کہ بنیش نے اپنے والد کی مرضی کے بغیر عرفان سے شادی کی تھی، اور اس کے گھروالوں نے بنیش سے لاتعلقی اختیار کررکھی تھی، اس کے والد نے بنیش کو کہا تھا کہ ان کے لئے وہ مرگئی ہے، جس کے بعد کسی نے بھی بنیش سے رابطہ نہیں رکھا۔

ملک عرفان کے والد محمد شریف نے بھی برطانوی میڈیا کیلئے جو بیان جاری کیا ہے، اس میں انہوں نے اپنے بیٹوں سے کہا ہے کہ وہ خود کوپولیس کے حوالے کردیں، اور الزامات کا سامنا کریں، محمد شریف کا کہنا ہے کہ وہ اپنی معصوم پوتی کی اچانک وفات پر خود بھی غمزدہ ہیں، انہیں عرفان نے بتایا تھا کہ سارہ کی موت حادثاتی ہوئی ہے، اس کے بیٹے گھبراہٹ کی وجہ سے برطانیہ سے پاکستان آگئے۔

واضح رہے کہ پوسٹمارٹم اور تجزیہ کے باوجود برطانوی پولیس بھی اب تک سارہ کی موت کی وجہ نہیں جان سکی، البتہ پولیس کا کہنا ہے کہ بچی کے جسم پر زخم کے کچھ پرانے نشانات موجود تھے، بنیش بتول نے جو ویڈیو بیان جاری کیا ہے، اس میں وہ اپنے شوہر ملک عرفان کے ساتھ پلنگ پر بیٹھی نظر آتی ہیں، انہوں نے دوپٹہ اوڑھا ہوا ہے، عرفان کے چہرے پر پریشانی کے آثار نمایاں ہیں، بنیش بتول نے انگریزی میں اور پہلے سے لکھا ہو امختصر بیان ویڈیو میں پڑھتے ہوئے کہا کہ میں سارہ کے بارے میں بات کرنا چاہتی ہوں، بچی کی موت ایک حادثہ تھی، اس واقعہ کے بعد پاکستان میں ہمارا خاندان بہت متاثر ہوچکا ہے۔

جہلم میں مقیم میرے دیور عمران کے حوالے سے میڈیا میں جو یہ بیان چلا تھا کہ سارہ کی موت سیڑھیوں سے گرنے کی وجہ سے ہوئی ہے، وہ غلط ہے، عمران شریف نے ایسا کوئی بیان نہیں دیا، ہمارے خاندان کے کچھ افراد کو پولیس نے تحویل میں لے رکھا ہے، اور باقی چھپتے پھر رہے ہیں، بچے اسکول نہیں جا پارہے، سب خوفزدہ ہیں، گھروں میں راشن ختم ہوچکا ہے، کیوں کہ خوف کے مارے کوئی باہر نہیں جارہا،بنیش کے بتول اس لئے وہ چھپے ہوئے ہیں، تاہم وہ برطانوی پولیس سے تعاون کیلئے تیار ہیں، اس موقع پر ان کے شوہر ملک عرفان خاموش ساتھ بیٹھے رہے، بیان سامنے آنے کے بعد برطانوی پولیس کا کہنا ہے کہ انہیں ملک عرفان اور بنیش کے ساتھ موجود ان کے پانچ بچوں کی فکر ہے، جن کی عمریں ایک سے 13 برس ہیں، واضح رہے کہ بڑا 13 سالہ بچہ سارہ کا حقیقی بھائی تھا، جو پولش خاتون سے ہے۔

Leave A Reply

Your email address will not be published.